جوڑوں کے درد کا شافی علاج جوڑوں کے درد کیلیے لاجواب نسخہ

:جوڑوں کے درد کا شافی علاج جوڑوں کے درد کیلیے لاجواب نسخہ

جوڑوں کا درد کیا ہے؟

جوڑوں کی تکلیف عام ہے اور عام طور پر ہاتھوں، پیروں، کولہوں، گھٹنوں یا ریڑھ کی ہڈی میں محسوس ہوتی ہے۔ درد مستقل ہو سکتا ہے یا یہ آ کر جا سکتا ہے۔ کبھی کبھی جوڑ سخت، درد، یا زخم محسوس کر سکتا ہے۔ کچھ مریض جلن، دھڑکنے، یا “جھانسی” کے احساس کی شکایت کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ، جوڑ صبح کے وقت سخت محسوس کر سکتا ہے لیکن ڈھیلا ہو جاتا ہے اور حرکت اور سرگرمی سے بہتر محسوس ہوتا ہے۔ تاہم، بہت زیادہ سرگرمی درد کو بدتر بنا سکتی ہے.

اگرچہ درد کا کوئی علاج نہیں ہوسکتا ہے، لیکن یہ مریض کو راحت پہنچانے کا انتظام کیا جاسکتا ہے۔ بعض اوقات بغیر کاؤنٹر کی ادویات لینے سے یا روزانہ کی سادہ مشقیں کرنے سے درد دور ہو سکتا ہے۔

جوڑوں کے درد کا علاج کیسے کیا جاتا ہے؟

  • گھر پر سادہ علاج ، جیسے متاثرہ جگہ پر ہیٹنگ پیڈ یا برف لگانا، مختصر مدت کے لیے دن میں کئی بار تجویز کیا جا سکتا ہے۔ گرم باتھ ٹب میں بھگونے سے بھی راحت مل سکتی ہے۔
  • ورزش طاقت اور کام کو واپس حاصل کرنے میں مدد کر سکتی ہے۔ چہل قدمی، تیراکی، یا دیگر کم اثر والی ایروبک ورزش بہترین ہے۔ وہ لوگ جو سخت ورزش یا کھیلوں کی سرگرمیوں میں حصہ لیتے ہیں انہیں اس کی پیمائش کرنے یا کم اثر والے ورزش کا معمول شروع کرنے کی ضرورت پڑسکتی ہے۔ نرم کھینچنے والی مشقیں بھی مددگار ثابت ہوں گی۔ کسی بھی ورزش کا پروگرام شروع کرنے یا جاری رکھنے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ کریں۔
  •  

:اجزائے ترکیبی

ایک عدد دیسی مرغی کا انڈہ لیں۔

انڈے کی زردی علیحدہ کر لی

پهر جتنی زردی ہے، اتنا ہی خالص شہد زردی میں مکس کر لیں۔

پهر سفید پهٹکڑی پیس کر آدها چمچ زردی اور شہد میں مکس کر لیں۔

ترکیب استعمال

جب تینوں چیزیں مکس ہو جائیں پهر اس شیرے کو

اگر کسی شخص کے کمر میں درد ہو

یا گهٹنے میں پانی ہو گیا ہو ہو

یا گهٹنے میں چربی ہو گئ ہو

اور گهٹنا سوج گیا ہو،

چلنے پهرنے سے معذور ہو گیا ہو

یا جسم کے کسی بهی حصہ میں سخت درد ہو

یا کسی کو سخت چوٹ لگ جاۓ

تو انڈے کی ذردی، شہد، پهٹکڑی والا شیرہ بنا کر متاثرہ جگہ پر ملنا شروع کر دیں تو درد کو فوری ختم کرتا ہےـ

گهٹنے پر 3ہفتہ مالش کرنے سے گهٹنے کی چربی، سوجن، پانی کو ختم کرتا ہےـ

اگر خون جم گیا ہو تو خون پگهلا دیتا ہے،3،4 دفعہ متاثرہ جگہ پر مالش کرنے سے مکمل آرام ملتا ہے۔

:جوڑوں کے درد کا شافی علاج

گرم  اور ٹھنڈا کمپریشن-

گرم اور سرد دونوں کمپریسس اینٹی سوزش کے طور پر کام کرتے ہیں۔ گرمی پٹھوں کو آرام دیتی ہے۔ بہتر نتائج کے لیے، آپ گرم پانی کی بوتل یا گرم پیڈ استعمال کر سکتے ہیں۔ آپ گھٹنوں کی سوجن کو کم کرنے کے لیے برف بھی استعمال کر سکتے ہیں۔ آپ آئس کیوب کو کپڑے میں لپیٹ کر متاثرہ جگہ پر لگا سکتے ہیں۔

:ادرک

ادرک میں سوزش کم کرنے والے مرکبات ہوتے ہیں جو سوزش کو کم کرنے میں مدد دیتے ہیں۔ یہ جڑی بوٹی جنجرول نامی مرکب سے بھرپور ہوتی ہے جو کہ سوزش کو دور کرتی ہے۔ ادرک کا تیل استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ ادرک کی چائے پینے سے بھی مدد مل سکتی ہے۔ آپ ادرک کو گرم پانی میں شہد اور لیموں ملا کر بھی پی سکتے ہیں۔ درد کم ہونے تک آپ دن میں 2-3 کپ پانی پی سکتے ہیں۔

:ہلدی

  ہلدی ایک جادوئی مسالا ہے۔ اس کے بہت سے صحت کے فوائد ہیں۔ اس میں اینٹی سیپٹیک، اینٹی سوزش اور اینٹی آکسیڈینٹ خصوصیات ہیں۔ اس میں کرکومین ہوتا ہے جو کہ ہلدی میں پایا جانے والا ایک سوزش کش کیمیکل ہے جس میں بہت سے اینٹی آکسیڈنٹ خصوصیات ہیں۔ یہ ریمیٹائڈ گٹھیا کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے۔ یہ گھٹنوں کے درد کی ایک وجہ ہے۔ آرام کے لیے آدھا چائے کا چمچ پسی ہوئی ادرک اور ہلدی کو ایک کپ پانی میں 10 منٹ تک ابالیں۔ چھان کر حسب ذائقہ شہد شامل کریں اور آپ اس چائے کو دن میں دو بار پی سکتے ہیں۔

:تلسی

تلسی کو گٹھیا کے مرض میں فائدہ مند سمجھا جاتا ہے۔ اس میں سوزش اور اینٹی اسپاسموڈک خصوصیات ہیں۔ تلسی جوڑوں کے درد اور گٹھیا کو دور کرنے کے لیے بھی کام کرتی ہے۔ گھٹنوں کے درد سے نجات کے لیے آپ دن میں 3-4 بار تلسی کی چائے پی سکتے ہیں۔

:ضروری تیل

  ضروری تیلوں سے مالش کرنے سے آپ کو جوڑوں کے درد سے فوری نجات مل سکتی ہے۔ کچھ مطالعات کے مطابق ادرک اور نارنجی کا ضروری تیل گھٹنوں کے درد سے نجات دلانے میں اچھا کام کرتا ہے۔ یہ سختی کو دور کرتا ہے اور متاثرہ حصے میں درد کو کم کرتا ہے

.مالش کرنے کے بعد گرم پٹی بانده لیں،

1 بار کا شیرہ پورا لگانا ہے

اگر بچ جاۓ تو کاٹن پر لگا کر متاثرہ جگہ پر رکه دیں اور اوپر گرم کپڑا یا پٹی بانده لیں تو بغیر آپریشن گهٹنے کی چربی، پانی کو ختم کرتا ہے۔

-اور درد ختم کرنے کیلیے لاجواب ہے۔

:اروما تھراپی کی تیاری

ضروری تیل درد کو کم کرنے میں مدد کرسکتے ہیں۔

2008 میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ ادرک اور نارنجی پر مشتمل تیل سے مالش کرنے سے گھٹنوں میں درد اور کام میں بہتری آتی ہے جس میں اوسٹیو ارتھرائٹس کی وجہ سے اعتدال سے شدید درد ہوتا ہے۔

ایک تحقیق میں، محققین نے پایا کہ دار چینی ، ادرک، مستی اور تل کے تیل پر مشتمل مرہم لگانے سے درد، سختی اور حرکت پر ویسا ہی اثر پڑتا ہے جیسا کہ سیلسیلیٹ مرہم کے استعمال سے ہوتا ہے۔

:حرکت کرنا

ورزش کا تعلق اکثر گٹھیا کے جوڑوں کے درد میں کمی سے ہوتا ہے۔ 1 – 5 ورزش درد کو کم کر سکتی ہے کیونکہ یہ عضلات کو مضبوط کرتی ہے جو جوڑوں کو سہارا دیتی ہے، جسم کو اینڈورفنز پیدا کرنے کے لیے متحرک کرتی ہے جو درد کو دور کرتی ہے، دونوں یا کچھ اور۔

:نوٹ

یہ نسخہ روزانہ تازہ بنانا ہے اور سارا ہی متاثرہ جگہ پر مالش کرنا ہے

جتنا ہو سکے آگے پہنچائیں انشاءاللہ صدقؑہ جاریہ بن کر ثواب دارین کا باعث بنے گا…

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *